125

پاک فوج کابھارتی جنرل کو منہ توڑ جواب

بلاشبہ بھارتی آرمی چیف کی جانب ایل اوسی کے پار حملے کی دھمکی دیوانے کے خواب کے سواکچھ نہیں گزشتہ روزبھارتی آرمی چیف کی جانب سے بے سر و پابیان کے جواب میں پاک فوج کے ترجمان نے بھارتی جنرل کومنہ توڑ جواب دیتے ہوئے کہاکہ پاک فوج بھارتی جارحیت کامنہ توڑ جواب دینے کےلئے پوری طرح تیار ہے بلاشبہ گزشتہ سال بھارتی فضائیہ کی جانب سے دراندازی کے جواب میں پاک فضائیہ کے دیئے جانے والے جواب کوشاید بھارتی جنرل بھول گئے ہیں جس میں پاک فضائیہ نے دشمن کے دو جہازوں کوتباہ کرکے ایک پائلٹ کوگرفتار کرلیا تھابلاشبہ پاکستان نے ہمیشہ خطے میں امن کے قیام کےلئے کوششیں کی ہیں اور اس عزم کااظہار کیاہے کہ تمام تصفیہ طلب مسائل کو بات چیت کےذریعے ہی حل کیا جاسکتا ہے لیکن بدقسمتی سے بھارتی سرکار نے ہمیشہ پاکستان کی مذاکراتی پیشکش کا غلط مطلب نکالتے ہوئے اسے پاکستان کی کمزور ی سے تعمیر کرنے کی کوشش کی ہے مگر شاید بھارتی سورمابھول جاتے ہیں کہ پاک فوج دنیا کی بہترین افواج میں شمار کی جاتی ہیں جوجدید حربی صلاحیتوںا ور اسلحہ سے لیس اپنے دشمن کومنہ تو ڑ جواب دینے کی بھرپور صلاحیت رکھتی ہے بلاشبہ خطے کی موجودہ صورتحال میں بھارتی جنرل کا بیان انتہائی مضحکہ خیزاورخطے کومذید جنگ وجدل میں جھونکنے کی دانستہ کوشش ہے لیکن اگر بھارتی فوج نے کسی بھی قسم کی جارحیت مسلط کرنے کی کوشش کی تواسے ماضی سے بھی سخت جواب دیاجائے گاکیونکہ پوری قو م پاک فوج کی پشت پرکھڑی ہے اور وہ پا ک فوج کے شانہ بشانہ دشمن کے دانت کھٹے کرنے کیلئے تیار بیٹھی ہے ڈی جی آئی ایس پی آر میجر جنرل آصف غفور نے اپنے ٹویٹ میں کہا ہے کہ بھارتی آرمی چیف کا ایل او سی پار کارروائی کا بیان معمول کی ہرزہ سرائی اور اندرونی خلفشار سے توجہ ہٹانے کی کوشش ہے ۔ مسلح افواج کسی بھی قسم کی بھارتی جارحیت کا جواب دینے کیلئے تیار ہیں۔ ہفتہ کے روز ٹویٹر پر جاری بیان میں ڈی جی آئی ایس پی آر میجر جنرل آصف غفور نے بھارتی آرمی چیف کے بیان پر ردعمل دیتے ہوئے کہا ہے کہ بھارتی آرمی چیف کا ایل او سی پار فوجی کارروائی کا بیان معمول کی ہرزہ سرائی ہے اور اندرونی مسائل سے توجہ ہٹانے کی کوشش ہے۔ مسلح افواج ہر قسم کی بھارتی جارحیت سے نمٹنے کیلئے تیارہیں بھارتی آرمی چیف کی جانب سے ایل اوسی پار کرنے کے بیانات محض بیان بازی ہیںعلاوہ اذیں بھارت کے نئے آرمی چیف جنرل منوج مکند نروانے نے ہرزہ سرائی کرتے ہوئے کہا ہے کہ اگر بھارتی پارلیمنٹ حکم دیتی ہے تو بھارتی فوج پاکستان کے کشمیر کے حصول کیلئے کارروائی کرے گی اس حوالے سے گزشتہ روز نئی دہلی میں بھارتی میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے لیفٹننٹ جنرل منوج مکند نروانے نے دعویٰ کیا کہ ایک پارلیمانی قرار داد میں کہا گیا ہے کہ ’ پورا جموں اور کشمیر‘ (بشمول آزاد کشمیر) بھارت کا حصہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ ’ اس حوالے سے کئی سالوں سے پارلیمانی قرارداد موجود ہے کہ پورا جموں اور کشمیر بھارت کا حصہ ہے۔ بھارت کے نئے آرمی چیف نے مزید کہا کہ ’ اگر پارلیمنٹ کسی وقت یہ خواہش کرتی ہے کہ یہ حصہ بھی ہمارا ہوجائے اور اس حوالے سے ہمیں کوئی احکامات موصول ہوتے ہیں تو لازمی طور پر کارروائی کی جائے گی‘۔واضح رہے کہ گزشتہ برس 5 اگست کو بھارت کی جانب سے مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت کے خاتمے کے بعد سے اور مقبوضہ وادی کی صورتحال پر پاکستان اور بھارت کے تعلقات مزید کشیدہ ہوئے ہیں۔